ہم حکومت پاکستان کی کشمیر پالیسی سے مطمئن نہیں حکومت پاکستان مسئلہ کشمیر پر قومی کانفرنس منعقد کرے(حضرت علامہ زاہد الراشدی)

ہم حکومت پاکستان کی کشمیر پالیسی سے مطمئن نہیں حکومت پاکستان مسئلہ کشمیر پر قومی کانفرنس منعقد کرے(حضرت علامہ زاہد الراشدی)

گکھڑ(محمد گلشا د سلیمی)ہم حکومت پاکستان کی کشمیر پالیسی سے مطمئن نہیں حکومت پاکستان مسئلہ کشمیر پر قومی کانفرنس منعقد کرے،اگر حکومت پاکستان کشمیر کے مسئلہ پر قومی کانفرنس منعقد نہیں کرتی تو حکومت آزاد کشمیر خود قومی کانفرنس بلا کراس کی قرار داد حکومت پاکستان کو بھیجے مولانا زاہدالراشدی سیکرٹری جنرل پاکستان شریعت کونسل تفصیلات کے مطابق پاکستان شریعت کونسل کے مرکزی سیکرٹری جنرل حضرت علامہ زاہد الراشدی کی دعوت پر مرکزی جامع مسجد شیرانوالہ باغ میں تمام مکاتب فکر اور جماعتوں کے قائدین اور تاجر نمائندوں جماعت اہل حدیث کے مولانا سعید احمد کلیروی، مولانا مشتاق چیمہ، مولانا سلیمان شاکر، جمعیت علما پاکستان کے رہنما مولانا پیر نصیر احمد اویسی،اہلسنت والجماعت کے مولانا شوکت نصیر، جمعیت علما اسلام ضلع گوجرانوالہ کے امیر قاضی مراداللہ خان، جنرل سیکرٹری بابر رضوان باجوہ، ڈپٹی سیکرٹری محمد عبدالقادر عثمان، مولانا حافظ نصرالدین خان عمر، پاکستان شریعت کونسل پنجاب کے سیکرٹری اطلاعات مولانا حافظ امجد محمود معاویہ، جماعت اسلامی گوجرانوالہ کے رہنما مظہر اقبال رندھاوا، فرقان عزیز بٹ، آل جموں وکشمیر مسلم کانفرنس کے رہنما وحید الحق ہاشمی ایڈووکیٹ، تاجر رہنما میاں فضل الرحمن، شیخ خالداحرار،جرنلسٹ حافظ عبدالجبار نے شرکت کی۔اجلاس میں آل جموں وکشمیرمسلم کانفرنس کے راہنماء وحیدالحق ہاشمی ایڈووکیٹ نے کشمیر میں موجودہ صورت حال پر گفتگو کرتے ہوئے شرکائے اجلاس کو بتایا کہ ایک کڑوڑ کی آبادی میں 80%مسلمان اور 20%ہندو اور بدھ مذہب کے لوگ ہیں،اسرائیل کی طرح بھارت آبادی کے تناسب کو ختم کررہاہے،دس ہزاربھارتی آسام کے علاقہ سے کشمیر منتقل کردیئے گئے ہیں تاکہ مسلم آبادی کا تناسب کم ہوسکے،مقبوضہ کشمیر میں ڈیڑھ سال سے زائد آج بھی لاک ڈاؤن کرفیو پہلے سے زیادہ سخت چلا آرہا ہے،، مقبوضہ کشمیر میں 8لاکھ انڈین فوج تعینات ہے،ہر پانچ کشمیریوں پرایک فوجی اہلکار تعینات ہے،لیکن آج بھی کشمیری مسلمان اپنے حق کیلئے آواز بلند کیے ھوے ہیں،OICنے بھی آج تک کشمیریوں کے لئے کچھ نہیں کیا،بدقسمتی سے امت مسلمہ کو درپیش مسائل پر مسلمانوں میں آج بھی اتحاد اور یکجھتی کا فقدان ھے اور سب مسلم حکمران اپنے اپنے مفادات کی جنگ جاری کئے ھوے ہیں،یونائیٹڈ اسٹیٹ آف سعودیہ میں توسینما تک کھول دیے گئے ھیں،جبکہ کئی مسلم ممالک نے اسرائیل سے اتحاد بھی کرلیا ہے،اگر حکومت پاکستان،اور اقوام متحدہ نے سنجیدہ نوٹس نہ لیا تو نئی جنگ چھڑ سکتی ہے، ان حالات میں سب جماعتیں ملکر مؤثر اقدامات اٹھائیں،یونائیٹڈ اسٹیٹ اور حکومت پاکستان کو اپنی خارجہ پالیسی مزید بہتر کرنے کی ضرورت ہے،سکھ اور مرزائی حکومت سے جس طرح اپنے مفاادات لے رہے ہیں ہمارے لئے لمحہ فکریہ ہے!،جس طرح مسئلہ کشمیر پر وزیراعظم عمران خان نے اعلان کیا اس پر عملدر آمد ہوتا نظر نہیں آرہا،اس موقع پرجمیعت علمائے پاکستان کے راہنما پیر نصیراحمد اویسی نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اس دن کو یوم کشمیر کا دن انتخاب کرنے پر قاضی حسین احمد کا کردار ہمیشہ یاد رکھا جائے گا،حکومت پاکستان بھی اس دن کی اہمیت کو اجاگر کرہی ہے،دبئی میں تو مندرکا افتتاح کرکے مسلمانوں کو تکلیف پہنچائی گئی،لیکن مظلوم کشمیریوں کے لئے ہر فورم پر ہمیں زیادہ سے زیادہ آواز بلند کرنے کی ضرورت ھے،مولانا سلیمان شاکرنے کہا کہ مایوسی کی بجائے ہمیں آواز یکجہتی کو بلند کرتے رہنا چاہیے مولانا مشتاق چیمہ نے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہمیں وقتا فوقتا مسئلہ کشمیر کو زندہ رکھنا چاہیے،بابر رضوان باجوہ ضلعی جنرل سیکرٹری جمیعت علماء اسلام(ف) نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حکومتی سطح پہ کشمیر کاز پہ جو عملاپسپائی موجودہ حکومت نے اختیار کی ہے وہ صاف ظاہر ہوتا ہے کہ صیہونی ایجنڈے پہ عمل پیرا ہے، مظہر اقبال رندھاوا سمیت دیگر رہنماؤں نے کشمیریوں کی جدوجہد آزادی پہ لازوال قربانیوں اوربھارتی ظلم وجبر کے مقابلے میں استقامت کا مظاہرہ کرنے پر کشمیری نوجوانوں کوخراج تحسین پیش کیا

Leave your comment
Comment
Name
Email